Poetry by Hazrat Mehboob-e-Zaat (1898 – 1961) (تیرے قدموں میں رہتے ہیں تارے)


تیرے قدموں میں رہتے ہیں تارے

دونوں عالم کے راج دلارے

تو ہے داتائے کل میرے وارث

ہم ہیں محتاج تیرے ہی سارے

میری کشتی لگا دے کنارے

دونوں عالم کے راج دلارے

چلتا ہے عالم تیرے اشارے

ہم تو جیتے ہیں تیرے سہارے

ان گداؤں کو دے بھیک مولا

اور جائیں یہ کس کے دوارے

لن ترانی تھی موسی کے حق میں

آج جلوے ہیں تیرے نیارے

تو ہی تو تو ہی تو تو ہی تو ہے

ہر کے ہر میں ہیں تیرے نظارے

جس نے دیکھا تجھے اس جہاں میں

اُس کو ہوں گے وہاں بھی نظارے

تُو ہی مالک کُن فکاں ہے

میرے یس طہ پیارے

الف کھل کر بنا عین جبکہ

میم میں چھپ گئے بھید سارے

کل شیء ہلاکت پہ مبنی

تیرا چہرا ہی یبقی پُکارے

حُبِّ حیدر کا عوضانہ جنت

بغضِ حیدر ہے دوزخ کنارے

If you want to receive or deliver something related to this post, feel free to comment.

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: