Hazrat Ali’s quote # 17


تخلیقِ آدم

پھر خُدا نے فرشتوں سے چاہا کہ وہ اس کی امانت کا حق ادا کریں۔ اس سے انہیں اپنے عہد و وصیت کی طرف متوجہ کیا کہ آدم کو سجدہ کریں اور اس کی عظمت و بزرگی کے سامنے سرِ نیاز جھکا دیں۔

سب نے سجدے میں سر جھکا دیے سوا ابلیس کے جسے آدم کو سجدہ کرتے غیرت دامن گیر ہوئی۔ اس پر شقاوت طاری ہو گئی۔ اپنے آگ سے پیدا ہونے کا خیال کر کے اس نے غُرور کیا اور مٹی کے بنے ہوئے آدم کو حقیر و کم مایا جانا۔ اللہ نے اس کو مہلت عطا فرمائی کہ وہ غضبِ الہٰی کا مستحق ہو جائے، بد بختی پورے طور پر تمام ہو جائے اور وعدہ پورا ہو کر رہے۔ چنانچہ خدا نے فرمایا کہ تجھے وقتِ معلوم تک کے لیے مہلت دی جاتی ہے۔

پھر خدا نے آدم کو ایک ایسے مکان میں رکھا جس میں زندگی کی ہر آسائش مہیا تھی۔ یہاں وہ بڑی عافیت و امن سے تھا۔ خدا نے اس کو شیطان اور اس کی دشمنی سے ہوشیار اور چوکنا رہنے کی تاکید بھی کی لیکن آخر کار شیطان نے آدم کو دھوکا دے ہی دیا۔

پھر خدائے تعالیٰ نے آدم کی توبہ قبول کی اور اپنے کلمہ رحمت سے نوازا۔ اس سے جنت میں پھر بلا لینے کا وعدہ کیا اور آخر اسے دار البلاء میں اتارا جو توالد و تناسُل کی دنیا ہے۔

If you want to receive or deliver something related to this post, feel free to comment.

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: